Mujeeb Ur Rehman Shami on Benazir and Maryam Nawaz

Mujeeb Ur Rehman Shami

16 نومبر 1988 کے الیکشن کی انتخابی مہم 14 نومبر کی رات 12 بجے ختم ہونے جارہی تھی اور سب کی نظریں نوازشریف اور بینظیر کے آخری جلسے پر لگی تھیں۔ بینظیر کا آخری جلسہ چوبرجی لاہور میں رکھا گیا اور نوازشریف کا جلسہ موچی دروازے کے تاریخی مقام پر تھا۔

غالباً 12 یا 13 نومبر کی شام مجید نظامی کی رہائش گاہ پر دائیں بازو کے چوٹی کے کالم نویس اور صحافی جمع ہوئے۔ دوران گفتگو کسی نے ان دونوں جلسوں کا ذکر چھیڑ دیا تو وہاں موجود اکثریت نے رائے ظاہر کی کہ بینظیر کا جلسہ نوازشریف سے بڑا ہوگا۔

مجیب الرحمان شامی تجزیہ  کرتے  کہ بینظیر کے جلسے میں آدھے سے زیادہ لوگ تو صرف اس کا تِل دیکھنے آتے ہیں ۔ ۔ ۔  مجیب الرحمان شامی کی اس بات پر سب ہنس پڑے۔

یاد رہے، بینظیر مرحومہ کی گردن کے نچلے حصے پر واضح قسم کا تِل ہوا کرتا تھا جو شاید عام شخص کیلئے تو کسی قسم کی دلچسپی کا باعث نہ ہوتا لیکن مجیب الرحمان شامیوں کیلئے اس میں دلچسپی اور تبصرے کا بہت کچھ سامان موجود تھا۔

آج 30 برس بعد اٹک میں مریم نواز نے بھی جلسے سے خطاب کیا۔ مجیب الرحمان شامیوں سے پوچھنا یہ تھا کہ آج جلسے میں موجود لوگوں کی کتنی تعداد مریم نواز کے تِل دیکھنے آئی تھی؟

  1. furtdso linopv June 6, 2018 at 3:01 pm

    I¦ve recently started a blog, the information you offer on this web site has helped me greatly. Thank you for all of your time & work.